...
آذان ہونے کے بعد دوسری بار لاعلمی میں آذان دینے کا کیا حکم ہے؟

آذان ہونے کے بعد دوسری بار لاعلمی میں آذان دینے کا کیا حکم ہے؟

سوال
ایک بار آذان ہو چکی کسی دوسرے شخص نے لاعلمی میں پھر آذ ان پڑھنا شروع کردی درمیان میں کسی ہمسایہ نے اطلاع دی کہ پڑھی جا چکی ہے اب یہ شخص رک جائے یا اذان کو پورا پڑھے؟
جواب
اگر مسجد محلہ میں ہے جہاں کے لئے امام و جماعت متعین ہے اور جماعت اولی ہو چکی اور اب کچھ لوگ جماعت کو آئے اور ان کو اذان کی خبر نہ تھی اور شروع کی اور اطلاع ہوئی تو رک جائے
اور اگر مسجد عام ہے، مثلاً مسجد بازار ،سرائے،اسٹیشن تو ہرگز نہ ر کے اذ ان پوری کرے ممانعت جہالت ہے اور اگر مسجد محلہ یا عام ہے اور جماعت اولی ابھی نہ ہوئی تو
اختیار ہے چاہے رک جائے یا پو ری کرے اور اتمام ( پوری کرنا ) اولی ہے ۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top
Seraphinite AcceleratorOptimized by Seraphinite Accelerator
Turns on site high speed to be attractive for people and search engines.