وہ زیور جو نابالغ لڑکیوں کے لیے بنوایا اس پر زکوۃ ہوگی؟
:سوال
وہ زیور جو کسی نے اپنی نابالغ لڑکیوں کے لیے بنوایا اس پر زکوۃ ہوگی؟
:جواب
نابالغ لڑکیوں کا جو زیور بنایا گیا اگر ابھی انھیں مالک نہ کیا گیا بلکہ اپنی ہی ملک پر رکھا اور ان کے پہننے کے صرف میں آتا ہے اگر چہ نیت یہ ہو کہ بیاہ ہوئے پر ان کے جہیز میں دے دیں گے، جب تو وہ زیور ماں باپ جس نے بنایا ہے اُسی کی ملک ہے، اگر تنہایا اُس کے اور مال سے مل کر قد ر نصاب اُسی مالک پر اس کی زکوۃ ہے۔
مزید پڑھیں:زکوۃ دیئے مال پر اگلا سال آنے پر کیا دوبارہ سے زکوۃ ہوگی؟
اور اگر نابالغ لڑکیوں کی ملک کر دیا گیا تو اس کی زکوٰۃ کسی پر نہیں، ماں باپ پر تو یوں نہیں کہ اُن کی ملک نہیں، اور لڑکیوں پر یوں نہیں کہ وہ نابالغہ ہیں، جب جوان ہوں گی اُس وقت سے ان پر احکام زکوۃ وغیرہ کے جاری ہوں گے۔ (اسی طرح کے ایک اور سوال کے جواب میں فرماتے ہیں) جو زیور بچوں کو ہبہ کر دیا اس کی زکوۃ نہ اس پر نہ بچوں پر اُس پر اس لیے نہیں کہ یہ ملک نہیں ، اُن پر اس لیے نہیں کہ وہ بالغ نہیں۔
READ MORE  پرامیسری نوٹوں پر زکوۃ کا حکم؟

About The Author

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top