جس شخص کی فجر کی سنتیں رہ جائیں وہ جماعت کے فورا بعد سنت ادا کرے درست ہے یا نہیں؟
سوال
جس شخص کی جماعت پانے کی وجہ سے فجر کی سنتیں رہ جائیں وہ جماعت کے فورا بعد سنت ادا کرے درست ہے یا نہیں؟
جواب
سنت فجر کہ تنہا فوت ہوئیں یعنی فرض پڑھ لیے سنتیں رہ گئیں اُن کی قضا کرے تو بعد بلندی آفتاب پیش از نصف النہار شرعی کرے طلوع شمس سے پہلے اُن کی قضا ہمارے ائمہ کرام کے نزدیک ممنوع ونا جائز ہے
لقول رسول الله صلی الله تعالى عليه وسلم لاصلاة بعد الصبح حتى ترتفع الشمس
کیونکہ نبی صل اللہ تعالی علیہ سلم نے فرمایا ہے صبح کے بعد کوئی نماز جائز نہیں یہاں تک کہ سورج بلند ہو جائے۔
( صحیح البخاری، ج 1 ص 83 ، قدیمی کتب خانہ کراچی )
READ MORE  Fatawa Rizvia jild 04, Fatwa 172

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top