دیہات میں جمعہ وعیدین کی جواز کی کوئی صورت ہے؟
:سوال
دیہات میں جمعہ وعیدین کی جواز کی کوئی صورت ہے؟
: جواب
فی الواقع دیہات میں جمعہ وعیدین با تفاق ائمہ حنفیہ رضی اللہ تعالی عنہم ممنوع ونا جائز ہے کہ جو نماز شرعا صحیح نہیں اس سے اشتغال روا نہیں ۔ ہاں ایک روایت نادرہ امام ابو یوسف رحمۃ اللہ تعالی علیہ سے یہ آئی ہے کہ جس آبادی میں اتنے مسلمان مرد عاقل بالغ ایسے تندرست جن پر جمعہ فرض ہو سکے آباد ہوں کہ اگر وہ وہاں کی بڑی سے بڑی مسجد میں جمع ہوں تو نہ سما سکیں یہاں تک کہ انھیں جمعہ کے لئے مسجد جامع بنانی پڑے وہ صحتِ جمعہ کیلئے شہر سمجھی جائے گی۔ جس گاؤں میں یہ حالت پائی جائے اس میں اس روایت نو ادر کی بنا پر جمعہ و عیدین ہو سکتے ہیں اگر چہ اصل مذہب کے خلاف ہے مگر اسے بھی ایک جماعت متاخرین نے اختیار فرمایا اور جہاں یہ بھی نہیں وہاں ہرگز جمعہ خواہ عید مذہب حنفی میں جائز نہیں ہو سکتا بلکہ گناہ ہے۔ جید مفتیان کرام حرج کی وجہ سے (فی زمانہ امام ابو یوسف کی اس روایت نادرہ پر فتوی دیتے ہیں، ہمار افتوی بھی اسی روایت کے مطابق جاری ہوتا ہے۔ ہاشم)
مزید پڑھیں:چار رکعت احتیاطی ظہر کا ادا کرنا مستحب ہے یا واجب یا فرض؟
READ MORE  جس نماز میں تاخیر مستحب ہے اس سے کتنی تاخیر مراد ہے؟

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top