سال گزرنے کے بعد صاحب نصاب کل مال پر زکوۃ دے گا یا جس پر سال گزرا؟

سال گزرنے کے بعد صاحب نصاب کل مال پر زکوۃ دے گا یا جس پر سال گزرا؟

:سوال
رمضان میں میرے پاس نصاب (56 روپے) کی قدر مال آیا، دو ماہ بعد سوروپے ہو گئے، پھر دو ماہ بعد دو سوروپے ہو گئے، اب جب رمضان آئے گا تو میں نے 56 روپے کی زکوۃ نکالنی ہے یا دو سو روپے کی؟
:جواب
نصاب جبکہ باقی ہو تو سال کے اندر اندر جس قدر مال بڑھے اس پہلے نصاب کے سال تمام پر اس کل کی زکوہ فرض ہوگی، مثلا یکم رمضان کو سال تمام ہوگا اور اس کے پاس صرف سو روپے تھے تیس شعبان کو دس ہزار اور آئے کہ سال تمام چند گھنٹے بعد جب یکم رمضان آئے گی اس پورے دس ہزار ایک سو پر زکوۃ فرض ہوگی۔
مزید پڑھیں:مختلف مالیت کی اشیاء پر زکوۃ کا حکم؟
READ MORE  Fatawa Rizvia jild 06, Fatwa 491

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top